پیدائشی سرمایہ دار کا انقلاب کی باتیں کرنا مضحکہ خیز ہے، طاہرالقادری

نمائندہ ایکسپریس  اتوار 13 اگست 2017
یہ آئینی اداروں کیخلاف حکومت میں رہتے ہوئے ہرزہ سرائی کررہے ہیں، انکی پارٹی والے انکا علاج کروائیں،سربراہ عوامی تحریک۔ فوٹو : فائل

یہ آئینی اداروں کیخلاف حکومت میں رہتے ہوئے ہرزہ سرائی کررہے ہیں، انکی پارٹی والے انکا علاج کروائیں،سربراہ عوامی تحریک۔ فوٹو : فائل

لاہور: پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر محمد طاہرالقادری نے کہاکہ پیدائشی سرمایہ دار کا کنٹینرمیں بیٹھ کر انقلاب کی بات کرنا مضحکہ خیز ہے۔

ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ یہ اس نظام کے بلڈر، انجینئر، پروموٹر اور سپورٹر ہیں، اس نظام کو انھوں نے 35 سال پالا پوسا، ثمرات سمیٹے اوراسی نظام کو بچانے کے لیے ماڈل ٹاؤن لاہور اور اسلام آباد ڈی چوک میں لاشیں گرائیں، لگتا ہے ان کے ہاتھ میں تقریروں کی کوئی غلط فائل آگئی ہے، جس تنقید کی اپوزیشن میں رہتے ہوئے بھی کوئی گنجائش نہیں ہوتی، یہ آئینی اداروں کیخلاف حکومت میں رہتے ہوئے ہرزہ سرائی کررہے ہیں، انکی پارٹی والے انکا علاج کروائیں، پہلے یہ اپنے نام کیساتھ سابق دیکھ کرغصے میں آجاتے تھے، نااہل لگنے پرآپے سے باہرہوگئے۔

سربراہ عوامی تحریک نے کہا کہ یہ سڑکوں پر پوچھتے پھررہے ہیں ہمارا قصورکیا ہے، شہدائے ماڈل ٹاؤن کے ورثا ، یتیم بچے،پوچھ رہے ہیں انکے والدین اور عزیز و اقارب کا کیا قصور تھاکہ انھیں خون میں نہلایاگیا اور پھر انصاف کا قتل عام کیاگیا۔ اپنے لیے انصاف مانگنے والوں نے 14 شہیدوں کی ایف آئی آر بھی درج نہیں ہونے دی تھی۔ ان کا انقلاب یہی ہے کہ غریب بچوںکوکچل دیں ، انھیں اسپتال پہنچانے کے بجائے ان کے اوپر سے مزید گاڑیاں گزاریں اور پھر شہید کہہ کر انسانیت کا مذاق اڑائیں، انسانیت کے دشمن اس قاتل ’’انقلابی‘‘ نے بچے کے جنازے میں شرکت تک نہیں کی۔

ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ آدھے نواز شریف کوسپریم کورٹ نے بے نقاب کیا اور پورے نوازشریف نے چند روزکے اندر جی ٹی روڈ پر اپنے آپ کو بے نقاب کر لیا اور اسکے اندر چھپا ہوا ایک سفاک ڈکٹیٹر پوری طرح کھل کر سامنے آگیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ نواز شریف نے اپنا نام جمہوریت، اقتدار، حکومت، اپوزیشن، آئین ،پاکستان، نظام، ترقی رکھا ہوا ہے وہ سمجھتے ہیں اگر میں نہیں تو پھرکچھ بھی نہیں۔

سربراہ عوامی تحریک نے کہا کہ 16اگست کو مال روڈ پر شہدائے ماڈل ٹاؤن، شہدائے انقلاب کے ورثا زخمی، اسیران شریک ہونگے،ہم پرامن لوگ ہیں اور پرامن طریقے سے انصاف مانگیں گے۔

 



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔