دنیا کے تیز ترین ایتھلیٹ یوسین بولٹ کرئیر کی آخری دوڑ بھی ہارگئے

ویب ڈیسک  اتوار 13 اگست 2017
یوسین بولٹ 50 میٹر بھاگنے کے بعد  لڑکھڑا گئے اور قلابازیاں کھاتے ہوئے منہ کے بل زمین پر گر پڑے؛فوٹوفائل

یوسین بولٹ 50 میٹر بھاگنے کے بعد لڑکھڑا گئے اور قلابازیاں کھاتے ہوئے منہ کے بل زمین پر گر پڑے؛فوٹوفائل

لندن: دنیا کے تیزترین ایتھلیٹ کا اعزاز رکھنے والے یوسین بولٹ اپنے کرئیر کی آخری دوڑ میں بری طرح ہار گئے۔

لندن میں جاری عالمی مقابلوں میں ہونے والی مردوں کی 4×100 میٹر ریس میں یوسین بولٹ اپنے 3 ساتھیوں کے ساتھ جمیکا کی نمائندگی کررہے تھے جب کہ ان کے مدمقابل برطانیہ اور جاپان کی ٹیمیں تھیں۔

ریس میں یوسین بولٹ صرف 50 میٹر ہی بھاگے تھے کہ وہ لڑکھڑا گئے اور قلابازیاں کھاتے ہوئے منہ کے بل زمین پر گر پڑے۔ یوسین بولٹ کے  بری طرح زخمی ہونے کے بعد انہیں ساتھیوں کی مدد سے وہیل چئیر پر میدان سے باہر لے جایا گیا۔  یوسین بولٹ کے ریس سے باہر ہونے کے بعد برطانوی ٹیم نے پہلی مرتبہ مردوں کی 4×100 میٹر ریس میں طلائی کا تمغہ حاصل کیا۔

اس خبرکوبھی پڑھیں: یوسین بولٹ سے دنیا کے تیز رفتارایتھلیٹ کا اعزاز چھن گیا

اس سے قبل 4 سال تک 100 میٹر کی ریس میں دنیا کے تیز ترین ایتھلیٹ ہونے کا اعزاز رکھنے والے یوسین بولٹ ورلڈ ایتھلیٹ چیمپئن شپ میں بھی مات کھا گئے تھے اور یہ اعزاز امریکی ایتھلیٹ جسٹن گیلٹن کو حاصل ہوگیا تھا،  100 میٹر کی ریس میں بوسین بولٹ کے سخت ترین حریف  جسٹن گیلن نے مقررہ فاصلہ 9 اعشاریہ 92 سیکنڈ، کول مین نے 9 اعشاریہ 64 سیکنڈ جب کہ یوسین بولٹ نے یہ فاصلہ 9 اعشاریہ 95 سیکنڈ میں طے کیا۔

برطانوی میڈیا کے مطابق یوسین بولٹ آئندہ ہفتے ریٹائرمنٹ کا اعلان کردیں گے اور یہ ریس ان کی آخری دوڑ شمار کی جائے گی۔

 



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔