مسئلہ کشمیر 2022 سے پہلے حل کر لیں گے، بھارتی وزیر داخلہ کا دعویٰ

ویب ڈیسک  ہفتہ 19 اگست 2017
بھارت میں کئی مسائل ہیں جن میں دہشت گردی، ماؤ  تحریکیں اور مسئلہ کشمیر شامل ہیں، راج ناتھ سنگھ۔ فوٹو : فائل

بھارت میں کئی مسائل ہیں جن میں دہشت گردی، ماؤ تحریکیں اور مسئلہ کشمیر شامل ہیں، راج ناتھ سنگھ۔ فوٹو : فائل

نئی دہلی: بھارتی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے دعویٰ کیا ہے کہ مسئلہ کشمیر 2022 سے پہلے حل کر لیا جائے گا۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق بھارتی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے اپنے بیان میں کہا کہ بھارت میں کئی مسائل ہیں جن میں دہشت گردی، ماؤ تحریکیں اور مسئلہ کشمیر شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ان مسائل کے بارے میں سب ہی جانتے ہیں تاہم وہ صرف اس بات کی یقین دہانی کرانا چاہتے ہیں کہ حکومت نے 2022 تک نیا بھارت بنانے کا عزم کر رکھا ہے لہٰذا 2022 تک ان تمام مسائل کا کوئی نہ کوئی حل ڈھونڈ لیا جائے گا۔

ان خیالات کا اظہار راج ناتھ سنگھ نے نئی دہلی میں ’’نیا بھارت تحریک‘‘ کے سلسلے میں منعقدہ ایک تقریب سے خطاب کے دوران کیا۔ راج ناتھ سنگھ کا کہنا تھا کہ جب عوام 1942 میں انگریزوں کے خلاف ’’ہندوستان سے نکل جاؤ‘‘ مہم شروع کر کے 1947 میں آزادی حاصل کر سکتے ہیں تو 2017 میں نئے بھارت کے قیام کا عہد کر کے 2022 میں اسے حقیقت کا روپ کیوں نہیں دے سکتے۔

راج ناتھ سنگھ نے اس موقع پر حاضرین سے عہد لیا کہ وہ بھارت کو غربت، کرپشن، دہشت گردی، فرقہ پرستی، نسلی تعصب اور گندگی سے پاک بنائیں گے۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔