کوئٹہ میں نتائج کیلیے فوج کو بلایا جائے،عبدالقادر بلوچ

مانیٹرنگ ڈیسک  منگل 19 فروری 2013
فوج سے صورتحال ٹھیک نہیں ہوگی،نورعالم،’’کل تک‘‘ میں جاوید چوہدری سے گفتگو   فوٹو : فائل

فوج سے صورتحال ٹھیک نہیں ہوگی،نورعالم،’’کل تک‘‘ میں جاوید چوہدری سے گفتگو فوٹو : فائل

لاہور:  بی این پی کے سینیٹر میر حاصل بزنجو نے کہا ہے کہ فرقہ وارانہ سوچ کو ہمارے ہی حکمرانوں نے فروغ دیا ہے.

انتظامیہ اگر کام نہیں کرتی اور بلوچستان کے بارے میں سنجیدہ نہیں ہوتی تو چاہے فوج بھی بلالیں وہ بھی ناکام ہوجائے گی۔ ایکسپریس نیوز کے پروگرام کل تک میں میزبان جاوید چوہدری سے گفتگو میں انھوں نے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ ہزارہ کمیونٹی کے بارے میں سوچاجاتا ہے کہ ان کوہمسایہ ملک کی حمایت حاصل  ہے جبکہ مارنے والوں کا تعلق خلیجی ملک سے ہے.

موجودہ حالات میں سیاسی اور فوجی لیڈرشپ کو متحد ہونا پڑیگا، مسلم لیگ ن کے رہنما ریٹائرڈ عبدالقادر بلوچ نے کہا ہے کہ اگر کوئٹہ میں فوج بلا لی جائے تو نتائج حاصل کیے جاسکتے ہیں، فوج کو بلانے کے معاملے پر اس طرح قومی سطح پر بحث نہیں کرنی چاہیے اور اس کو اتنا بڑا مسئلہ بنانے کی بھی ضرورت نہیں، انھوں  نے مزید کہا کہ کوئٹہ میں ایجنسیاں اور دیگر حکومتی ادارے ناکام ہوچکے ہیں۔

پیپلزپارٹی کے رہنما نورعالم خان نے کہاکہ بلوچستان کے حالات آج سے خراب نہیں ہوئے، بلوچستان کے حالات پرویز مشرف کے دور سے ہی خراب چلے آرہے ہیں ، ہم غفلت مانتے ہیںلیکن یہ بھی سچ ہے کہ فوج اور ادارے اپنا کام نہیں کررہے، پیپلزپارٹی نے تو یہ دھماکے نہیںکیے اور فوج بلانے سے بھی صورتحال ٹھیک نہیں ہوگی۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔