ترک فوج شام کے صوبے ادلب میں داخل

ویب ڈیسک  جمعـء 13 اکتوبر 2017
کردستان میں ممکنہ فوجی آپریشن کے پیش نظر ترک فوجی دستے شمالی عراق میں داخل ہوگئے،فوٹو:انٹرنیٹ

کردستان میں ممکنہ فوجی آپریشن کے پیش نظر ترک فوجی دستے شمالی عراق میں داخل ہوگئے،فوٹو:انٹرنیٹ

 انقرہ: ترکی نے اعلان کیا ہے کہ اس کے فوجی دستے شام کے صوبے ادلب میں داخل ہوگئے ہیں۔

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق  12گاڑیوں اور 80اہلکاروں پر مشتمل ترک  فوج  کا پہلا دستہ شمالی علاقے ادلب میں داخل ہوگیا ہے ۔ سرحد پر مقیم باشندوں اور مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ انہوں نے ادلب کے مختلف علاقوں میں ترک فوج کو گشت کرتے دیکھا ہے جو کہ مغرب کی جانب پیش قدمی کررہی ہیں۔

دوسری جانب ترک صدر رجب طیب اردگان کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ان کی حکومت نے شمالی عراق سے متصل سرحد کو بتدریج بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس اقدام کا مقصد عراق کی وحدت کو برقرار رکھنے کے لیے بغداد حکومت سے تعاون کرنا ہے۔

یہ خبر بھی پڑھیںترک صدر نے عراقی کردستان میں فوجی کارروائی کی دھمکی دیدی

واضح رہے کہ عراق،ترکی اور ایران  نے کردستان آزادی ریفرنڈم پر شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کردستان کے علاحدہ  ریاست کے قیام کو روکنے کے لیے مشترکہ حکمت عملی اپنانے کا فیصلہ کیا تھا جس کے تحت کردعلاقے سے تیل کی ترسیل کو روکنا سرفہرست ہے۔

عراقی ریاست کردستان میں ترکی سے ملحقہ سرحد پر 15سے20فیصد کرد آباد ہیں جو اپنی آزاد ریاست کے لیے مسلح جدوجہد کافی عرصے سے جاری رکھے ہوئے ہیں اور ترکی کا ماننا ہے کہ خطے سمیت انقرہ میں ہونے والی دہشت گرد کارروائیوں میں کرد مسلح جنگجووں کا ہاتھ ہے



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔