سانحہ صفورا؛ فوجی عدالت سے سزائے موت پانے والے ملزمان کی اپیلیں مسترد

اسٹاف رپورٹر  جمعـء 7 دسمبر 2018
سنگین جرم میں سزا دی گئی، اپیل عدالت عظمیٰ میں ہو سکتی ہے، پراسیکوٹر جنرل، ملزمان کی اہلخانہ کی ملاقات کرائی جائے، درخواست گزار۔ فوٹو : فائل

سنگین جرم میں سزا دی گئی، اپیل عدالت عظمیٰ میں ہو سکتی ہے، پراسیکوٹر جنرل، ملزمان کی اہلخانہ کی ملاقات کرائی جائے، درخواست گزار۔ فوٹو : فائل

 کراچی:  سندھ ہائیکورٹ نے سانحہ صفورا میں فوجی عدالت سے سزائے موت پانے والے سعد عزیز اور دیگر ملزمان کی سزا کے خلاف اپیلیں مسترد کردی۔

سندھ ہائیکورٹ میں بینچ کے روبرو سانحہ صفورا میں فوجی عدالت کی سزائے موت کے خلاف دہشت گردوں کی اپیلوں کی سماعت ہوئی، عدالت نے سعد عزیز اور دیگر ملزمان کی پھانسی کے خلاف درخواست مسترد کردی جبکہ مجرموں سے اہل خانہ کی ملاقات اور ریکارڈ دکھانے کی درخواست پر ڈپٹی اٹارنی جنرل کو جواب کے لیے آئندہ سماعت تک مہلت دیتے ہوئے سماعت 31 دسمبر تک ملتوی کردی۔

پراسیکوٹر جنرل سندھ کا کہنا تھا کہ مجرموں کو فوجی عدالت نے سنگین جرم میں سزا سنائی ہے، فوجی عدالت کے فیصلے کے خلاف اپیل سپریم کورٹ میں دائر کی جاسکتی ہے، فوجی عدالت نے دہشت گرد سعد عزیز، طاہر منہاس، اظہر عشرت، حافظ ناصر اور اسد الرحمن کو سزا موت سنائی تھی۔

درخواست گزار کا کہنا تھا کہ درخواست گزاروں کو فوجی عدالت نے مختلف الزامات میں موت کی سزا سنائی ہے، مجرموں کے اہل خانہ کو مقدمات کی تفصیلات نہیں بتائی جارہی، اہل خانہ کی ملاقات کرائی جائے اور سزا پر نظرثانی کی جائے۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔