اسپن ہتھیاروں سے لیس کینگروز پاکستان آئیں گے

اسپورٹس ڈیسک  منگل 10 اگست 2021
24 برس بعد پاک سرزمین پر ٹیسٹ سیریز میں 3 اسپنرز کھلانے کے مشورے ۔  فوٹو : فائل

24 برس بعد پاک سرزمین پر ٹیسٹ سیریز میں 3 اسپنرز کھلانے کے مشورے ۔ فوٹو : فائل

سڈنی:  اسپن ہتھیاروں سے لیس کینگروز پاکستان آئیں گے جب کہ 24 برس بعد پاک سرزمین پر ٹیسٹ سیریز میں 3 اسپنرز کھلانے کے مشورے ملنے لگے۔

آسٹریلوی کرکٹ ٹیم کو آئندہ برس8 ٹیسٹ میچز کیلیے ایشیائی سرزمین پرآنا ہے،کینگروز پاکستان، بھارت اور بنگلہ دیش کا دورہ کریں گے، یہ آسٹریلیا کا 1998 کے بعد پاکستان کا پہلا ٹور ہوگا،اس دوران دونوں ممالک کے درمیان سیریز زیادہ تر متحدہ عرب امارات میں کھیلی جاتی رہی ہیں۔

اب امن و امان کی صورتحال بہتر ہونے کی وجہ سے پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی واپسی ہوچکی۔ ایشیا میں ٹیسٹ سیریز کیلیے کینگروز اسپن ہتھیاروں سے مکمل طور پر لیس ہوں گے۔

سابق ٹیسٹ اسپنر اسٹیو او کیف نے آسٹریلیا کو دورہ ایشیا کے دوران پلیئنگ الیون میں 3 فرنٹ لائن اسپنرز شامل کرنے کا مشورہ دیا ہے، وہ خود 2017 کے دورئہ بھارت کے دوران 14 وکٹیں اڑا چکے ہیں۔

انھوں نے کہاکہ مچل سویپسن اور ایشٹن ایگر ایشیا میں ناتھن لائن کو سپورٹ کرنے کیلیے تیار ہیں، ایگر کی بیٹنگ صلاحیت سلیکٹرز کو تمام تینوں اسپنرز کو ایک الیون میں شامل کرنے کا موقع فراہم کرسکتی ہے،انھوں نے مزید کہا کہ بولنگ کے لحاظ سے ہم اچھی حالت میں ہیں۔

ہمیں ابھی سے 3 اسپنرز، ایک فاسٹ اور ایک میڈیم پیسر کے بارے میں سوچنا چاہیے، ایشیا کیلیے یہ 5 بولنگ آپشنز بہترین ہیں، ہمارے لیے پہلے 3 پیسرز کے ساتھ کھیلنا فائدہ مند ثابت ہوا مگر گرمی اور کنڈیشنز کی وجہ سے ایشیا میں 3 اسپنرز کے ساتھ کامیابی مل سکتی ہے۔

واضح رہے کہ کیمرون گرین کی موجودگی سے آسٹریلیا کو ایک اضافی سیم بولنگ آپشن میسر ہوگا،ایگر شیفلڈ شیلڈ میں سنچری سے اپنی آل راؤنڈ صلاحیتوں کا اظہار کرچکے ہیں، سویپسن اس وقت ناتھن لائن کے بعد سیکنڈ چوائس ٹیسٹ اسپنر ہیں،گذشتہ موسم گرما میں انھوں نے5 میچز میں 32 وکٹیں لے کر کوئنزلینڈ کو ٹائٹل جتوایا تھا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔