وادی سون میں برساتی پانی کو جمع کرنے کے کامیاب تجربات

شبینہ فراز  پير 17 جولائی 2023
وادی سون میں بارش کے پانی کو تیرتی ہوئی آبگاہوں کی مدد سے صاف کیا جارہا ہے۔ فوٹو: شبینہ فراز

وادی سون میں بارش کے پانی کو تیرتی ہوئی آبگاہوں کی مدد سے صاف کیا جارہا ہے۔ فوٹو: شبینہ فراز

  کراچی: کوہ نمک کی وادی سون چاروں جانب گھرے پہاڑوں، خوبصورت جھیلوں اور کناروں پر اترتے پرندوں کی بڑی تعداد کے باعث ایک خوبصورت سیاحتی مقام سمجھی جاتی ہے اور ملک بھر سے سیاح یہاں کھنچے چلے آتے ہیں لیکن موسمیاتی تبدیلیوں نے اس انتہائی منفرد ماحولیاتی نظام(ایکو سسٹم) کو بھی خطرے میں ڈال دیا ہے۔

سطح مرتفع پوٹھوہار کے جنوبی کنارے کی حد بندی پاکستان کا معروف سلسلہ کوہ نمک کرتا ہے جو مغرب میں میانوالی سے لے کر مشرق میں جہلم تک پھیلا ہوا ہے۔ اسے کوہ نمک اس لیے کہا جاتا ہے کہ کیونکہ دنیا کے دوسرے سب سے بڑے نمک کے ذخائر یہاں دریافت ہوئے تھے۔ نمک کے یہ ذخائر  50 ملین سال قبل انڈین پلیٹ کے ایشین پلیٹ کے ساتھ ٹکرانے  کے نتیجے میں بحیرہ ء ٹیتھس کی تبخیر اور دریائے سندھ کے میدانوں کے قیام کا نتیجہ تھے۔

کوہ نمک کا مغربی کنارہ ایک نیم دائرہ تشکیل دیتا ہے جو وادی سون کو تخلیق کرتا ہے۔ وادی کے وسط میں بلندی سطح سمندر سے 2,000 فٹ ہے۔ یہاں واقع پانی کی نمکین جھیلیں بین الاقوامی اہمیت کی حامل ہیں۔ یہ جھیلیں سائیبیریا سے آنے والے پرندوں کا گھر ہیں جن میں بقا کے خطرے سے دوچار مرغابیاں بھی شامل ہیں۔

کوہ نمک کی آب گاہوں کا کمپلیکس کلر کہار ،کھبیکی، اچھالی، جھلر اور نمل جھیلوں پر مشتمل ہے۔ یہ علاقہ مقامی بھیڑوں کی ایک قسم پنجاب اڑیال کا مسکن بھی ہے۔

کھبیکی کا علاقہ نمکین اور کیچڑ زدہ ہے اور سردیوں میں پرندوں کے کئی اقسام  کے لیے انتہائی پرکشش ہے جن میں خطرے سے دوچار سفید سر والی بطخیں بھی شامل ہیں۔ گذشتہ چند سالوں سے جھیل پر آنے والی مرغابیوں کی تعدادمیں بھی کمی واقع ہوئی ہے۔ کیونکہ اس آبی علاقے کے کمزور حیاتیاتی تنوع کو پرندوں اور مچھلیوں کے بے جا شکار اور جھیلوں میں پانی کی کمی سے زبردست نقصان پہنچا ہے۔ اچھالی جھیل بھی نمکین پانی رکھتی ہے اور ہجرت کرنے والے لم ڈھینگوں کے لیے مثالی علاقہ ہے۔ ہر سال یہ پرندے 3   سے 4   مہینوں کے لیے یہاں قیام کرتے ہیں اور اپنے طویل سفر کو جاری رکھنے کے لیے یہاں توانائی اکھٹا کرتے ہیں۔ کھبیکی ، اچھالی اور جھلر کو اچھالی کمپلیکس کا حصہ قرار دیا گیا ہے اور  1996 میں اسے رامسر سائٹ تسلیم کیا گیا۔

اچھالی کمپلیکس کو 1966میں جنگلی حیات کے لیے محفوظ قرار دیا گیا تھا۔  دس سال بعد جب پاکستان نے 1976میں رامسر کنونشن میں شمولیت اختیار کی تونایاب پرندوں کی آمد کے باعث ان جھیلوں کو رامسر سائٹ  یعنی بین الاقوامی اہمیت کی حامل آب گاہ کا درجہ دیا گیا ۔ رامسر سائٹس میں ان جھیلوں کا نمبر 818 ہے۔ رامسر کنونشن میں ان آب گاہوں کو زیادہ اہمیت دی گئی ہے جہاں معدومی کے خطرے سے دوچار جانور، پرندے اور پودے پائے جاتے ہیں۔

سائیبیریا کے سرد علاقوں سے آنے والے مہمان پرندوں میں سب سے اہم سفید سر والی بطخیں ہیں جن کی نسل کو اب بقا کا خطرہ لاحق ہے۔ اس کے علاوہ لم ڈھینگ، سارس ، چتکبرا سارس، قاز ، سفید آنکھوں والی مرغابی، خاکستری رنگ کے گدھ اور شاہی عقاب بھی اس علاقے میں پائے جاتے ہیں۔ ان جھیلوں میں مچھلیاں بھی پائی جاتی ہیں۔ بدلتے موسموں کی تبدیلی سے جھیلوں میں پانی کی کمی کے ساتھ ساتھ علاقے سے بڑے پیمانے پر جنگلات کا صفایا بھی پرندوں کے لیے بہت بڑے خطرے کی صورت سامنے آیا ہے۔

یہ جون کا آخری ہفتہ تھا جب ہمیں وادی سون اور اس کی خوبصورتی کو قریب سے دیکھنے کا موقع ملا، صحافیوں کے لیے اس دورے کا اہتمام اسلام آباد کے تھنک ٹینک انسٹی ٹیوٹ آف ااربن ازم  نے کیا تھا ۔صحافیوں کے اس دورے کا مقصد پانی کے انتظام کے متعدد منصوبوں کے اثرات کو دیکھنا تھا، خاص طور پر بارش کے پانی کو ذخیرہ کرنے کی تکنیک، جس نے مقامی آبادیوںکو پانی کی بڑھتی ہوئی ضروریات سے نمٹنے میں مدد فراہم کی ہے۔

یہ جون کا تیسرا ہفتہ تھا جس میں میں درجہ حرارت  35جبکہ احساس 42  ڈگری سینٹی گریڈ کو چھورہا تھا۔ موسموں کی یہ شدت یقینا موسمیاتی تبدیلیوں ہی کا شاخسانہ تھا۔ اب یہ بات شاید ہر پاکستانی جانتا ہے کہ پاکستان موسمیاتی تبدیلیوں کا شکار بننے والے ممالک کی فہرست میں اولین دس نمبروں پر موجود ہے۔ اس سال بھی ہمارا نمبر پانچواں ہے۔

ایک تنگ اور زیادہ تر ناہموار سڑک کے ذریعے 50 کلومیٹر کا سفر ہمیں ضلع خوشاب سے وادی سون لے گیا تھا۔دوپہر کے وقت سڑک تیز سورج کی روشنی سے چمک رہی تھی کیونکہ دونوں طرف لمبے چنار بھی دھوپ کا راستہ روکنے میں ناکام رہے تھے۔

اگرچہ وادی میں درجہ حرارت دارالحکومت اسلام آباد اور یہاں تک کہ ملحقہ خوشاب شہر کے مقابلے میں 3 سے 5 ڈگری سینٹی گریڈ تک کم تھا، لیکن یہ اب بھی گرم تھا، جو موسمیاتی تبدیلیوں کی بڑھتی ہوئی تباہ کاریوں کی عکاسی کرتا ہے۔

ہماری پہلی منزل اچھالی جھیل تھی ، جو جھیلوں میں سب سے بڑی اور نمکین پانی پر مشتمل ہے، طویل عرصے سے سائبیرین پرندوں کی پسندیدہ منزل رہی ہے جو سائبیریا سے ہجرت کر کے ہر سال سخت سردیوں سے بچنے کے لیے آتے ہیں۔

تاہم، جھیل میں کشتی رانی اور دیگر آبی کھیلوں کی سرگرمیوں کی وجہ سے حالیہ برسوں میں یہاں نقل مکانی کرنے والے پرندوں کی تعداد میں کافی کمی آئی ہے۔

زراعت، بنیادی طور پر سبزیوں کی کاشت مقامی لوگوں کی روزی روٹی کا بنیادی ذریعہ ہے۔ پھول گوبھی، آلو، ہری مرچ اور دیگر سبزیوں کے بڑے اور چھوٹے کھیت سڑک کے دونوں جانب پھیلے ہوئے تھے۔

سبزیوں کی بڑی پیداوار، جو سالانہ دو سے تین فصلوں کے برابر ہوتی ہے، نے مقامی کسانوں کی آمدنی میں نمایاں اضافہ کیا ہے۔

تاہم، اس آمدنی میں اضافے کا ایک منفی پہلو بھی ہے۔ سبزیوں کی بڑے پیمانے پر کاشت، خاص طور پر گوبھی اور بند گوبھی، جس کے لیے بہت زیادہ پانی کی ضرورت ہوتی ہے، نے حالیہ برسوں میں زیر زمین پانی کی سطح کو کم کر دیا ہے، جس سے پورے خطے میں پانی کی قلت پیدا ہو گئی ہے۔

بارش کے پانی کا ذخیرہ

بارش کا پانی اور پہاڑی چشمے مقامی لوگوں کے لیے پینے کے پانی کے دو بڑے ذرائع ہیں کیونکہ جھیلوں کا پانی کھارا ہے اور پینے یا زراعت کے مقاصد کے لیے موزوں نہیں ہے۔

مقامی کسان کاشت کاری کے لیے ٹیوب ویل اور بارش کے پانی پر انحصار کرتے ہیں، جس کے نتیجے میں زیر زمین پانی کی سطح میں تیزی سے کمی واقع ہوئی ہے۔

زیر زمین پانی کی گرتی ہوئی سطح اور پانی کی کمی کو محسوس کرتے ہوئے، ورلڈ وائیڈ فنڈ فار نیچر (WWF) پاکستان نے گزشتہ سال خطے میں مستقبل میں پانی کے انتظام کے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے مختلف قسم کے منصوبے شروع کیے، خاص طور پر بارش کے پانی کو ذخیرہ کرنے کی تکنیک۔

بارش کے پانی کا ذخیرہ ایک ایسی تکنیک ہے جو نسبتاً صاف سطحوں جیسے چھت، زمین کی سطح یا چٹان کے کیچمنٹ سے مستقبل میں استعمال کے لیے بارش کے پانی کو جمع کرنے، پہنچانے اور ذخیرہ کرنے کے لیے استعمال ہوتی ہے۔

یہ پانچ بڑے اجزاء  پر مشتمل ہے۔ کیچمنٹ (بارش کے پانی کو جمع کرنے اور ذخیرہ کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے)، کنوینس سسٹم (یہ ذخیرہ کیے ہوئے پانی کو کیچمنٹ سے ریچارج زون میں لے جانے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے)، فلش (بارش کے پہلے سپیل کو نکالنے کے لیے)، فلٹر (بارش کے جمع کیے گئے پانی کو فلٹر کرنے اور آلودگی کو دور کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے)، اور ٹینک اور ریچارج ڈھانچے (فلٹر شدہ پانی کو ذخیرہ کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے جو استعمال کے لیے تیار ہے)۔

اب تک، اس علاقے میں 1300 کیوبک میٹر سالانہ پانی بھرنے کی صلاحیت کے ساتھ تقریباً 16 رین واٹر ہارویسٹنگ یونٹس قائم کیے گئے ہیں، WWF اگلے دو سالوں میں اس تعداد کو 34 تک بڑھانے کا منصوبہ بنا رہا ہے۔

یہ یونٹس جھیلوں کے گردونواح میں قائم کیے گئے ہیں تاکہ زیادہ سے زیادہ بارش کے پانی کو آبی ذخائر میں ڈالنے اور ان کے کھارے پانی میں گھلنے سے بچایا جا سکے۔

منصوبے کے فوائد کا ذکر کرتے ہوئے، WWF- پاکستان سے وابستہ ایک سینئر ماحولیاتی ماہر عمر بن خالد نے کہا کہ یہ تکنیک کم لاگت کی ہے، اور پانی اور توانائی دونوں کے تحفظ کو فروغ دینے کے علاوہ، پانی کے بل کو کم کرنے میں مدد دیتی ہے۔

تاہم، انہوں نے مزید کہا، اس کی تنصیب کے لیے کچھ تکنیکی مہارتوں کی ضرورت ہوتی ہے۔

وضو کے پانی کے دوبارہ استعمال کا نظام

وضو کے پانی کے دوبارہ استعمال کا نظام بنیادی طور پر مساجد میں وضو کے مقاصد کے لیے استعمال ہونے والے پانی کو ٹریٹمنٹ اور ری سائیکل کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔

ایک اندازے کے مطابق روزانہ تقریباً 500 نمازیوں والی مسجد میں اوسطاً 2.5 کیوبک میٹر تک پانی دوبارہ استعمال کیا جاتا ہے۔

چھوٹے ذرات کو ہٹانے اور جراثیم کشی کے لیے پانی کو ریت اور بجری کے فلٹر سے گزارا جاتا ہے۔

وضو کے صاف کیے گئے پانی کو آبپاشی، باغبانی، لان کی دھلائی، غرض یہ کہ سوائے پینے کے ہر ضرورت میں استعمال کیا جاسکتا ہے۔

وضو کا پانی نسبتاً صاف ہوتاہے اور اس میں فزیو کیمیکل اور حیاتیاتی آلودگی کم ہوتی ہے۔

اب تک اس علاقے میں وضو کے پانی کے دوبارہ استعمال کے دو نظام نصب کیے جا چکے ہیں جن میں سالانہ 4,500 مکعب میٹر پانی صاف کرنے کی صلاحیت موجود ہے۔

آنے والے مہینوں میں مزید دو سسٹم نصب کیے جائیں گے۔

“وضو واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹس کے فوائد بے شمار ہیں۔ یہ ضیاع کو کم کرکے پانی کے وسائل کو محفوظ رکھتا ہے، غیر علاج شدہ پانی کے اخراج کو روک کر ماحولیاتی آلودگی کو کم کرتا ہے، اور حفظان صحت اور صفائی کو فروغ دیتا ہے،” خالد نے مزید بتایا۔

ایک چھوٹے سے مردوال گاؤں میں، جو وادی سون کے 36 دیہاتوں میں سے ایک ہے، اور اچھالی جھیل کمپلیکس سے چند کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے، ڈبلیو ڈبلیو ایف نے ایک اور پروجیکٹ، فلوٹنگ ٹریٹمنٹ ویٹ لینڈ (FTW) متعارف کرایا ہے، جسے عام طور پر تیرتے پانی کی صفائی کا نظام کہا جاتا ہے۔

یورپ اور دنیا بھر کے دیگر خطوں میں اس تکنیک کوکثرت سے استعمال کیا جاتا ہے، فلوٹنگ ٹریٹمنٹ ویٹ لینڈ واٹر ٹریٹمنٹ سسٹم کی ایک قسم ہے جو آبی ذخائر سے آلودگی کو دور کرنے کے لیے پودوں کے تیرتے پلیٹ فارم کا استعمال کرتی ہے۔

فلوٹنگ ٹریٹمنٹ ویٹ لینڈ کے ڈیزائن پانی کے معیار، موجود آلودگی کی اقسام اور مطلوبہ صفائی کے اہداف کو مدنظر رکھتے ہوئے مختلف ہوتا ہے۔

FTW میں پانی کی سطح پر چٹائی یا فوم، کا گدا رکھنا اور اسے گیلی زمین کے پودوں کے ساتھ لگانا شامل ہے۔ جیسے جیسے پودے بڑھتے ہیں اور جڑیں پانی میں پھیلتی ہیں، وہ غذائی اجزاء اور مختلف قسم کی آلودگیوں کوجذب کرلیتے ہیں۔

اوسطاً 19,000 کیوبک میٹر فی سال گندے پانی کو ایک ایکڑ کے سائز اور ایک میٹر کی گہرائی کے ساتھ ایک گندے پانی کے تالاب میں نصب ایک تیرتی ٹریٹمنٹ ویٹ لینڈ کے ذریعے ٹریٹ کیے جانے کا تخمینہ ہے۔

خالد نے کہا، “یہ پانی کی صفائی اور دوبارہ قابل استعمال بنانے کے لیے نسبتاً کم لاگت کا طریقہ ہے، تاہم اس میں بعض آلودگیوں، جیسے کہ بھاری دھاتیں اور حل پذیر نمکیات کو دور کرنے کی صلاحیت محدود ہے۔

FTW پانی کے معیار کو بہتر بنانے اور بہنے اور کٹاؤ کو روکنے کے علاوہ جنگلی حیات بشمول مچھلیوں، پرندوں اور حشرات کے لیے رہائش فراہم کرتا ہے۔

بہر حال اس نظام کے کچھ نقصانات بھی ہیں۔ یہ انتہائی موسمی حالات کے لیے خطرناک ہے اور طوفان یا تیز ہواؤں کے دوران نقصان پہنچا سکتا ہے۔

ڈبلیو ڈبلیو ایف کے اہلکار کے مطابق، ان کی طویل مدتی تاثیر اور ماحولیاتی اثرات پر محدود تحقیق اور ڈیٹا موجود ہے۔

دو FTWs، جو اب تک نصب ہیں، ہر سال تقریباً 49,000 کیوبک میٹر پانی صاف کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

ایک وسیع کھیتوں کے بیچ میں، دوپہر کی تپتی دھوپ میں، ملک وسیم آنے والے صحافیوں کو ایجنسی کے زمینی پانی کے ریچارج پروجیکٹ کے بارے میں بریفنگ دے رہے تھے، جس کا مقصد زمینی پانی کو ری چارج کرکے شہری سیلاب اور خشک سالی پر قابو پانا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ حال ہی میں تعمیر کیے گئے چار مصنوعی زمینی پانی کے ریچارج کنوؤں میں سالانہ تقریباً 31,000 کیوبک میٹر پانی بھرنے کی صلاحیت ہے۔

پراجیکٹ کوآرڈینیٹر، وسیم کے مطابق ڈبلیو ڈبلیو ایف اگلے دو سالوں میں مزید چار زیر زمین پانی کے ریچارج کنویں تعمیر کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

“یہ تعدادبظاہر کم نظر آتی ہے لیکن مقامی آبادی کی زندگیوں میں تبدیلی لانے کے حوالے سے ان کی تاثیر بہت زیادہ ہے،” ڈاکٹر اعجاز احمد، ایک تجربہ کار ماہر ماحولیات اور انسٹی ٹیوٹ آف اربنزم کے سینئر پروگرام فیلو نے کہا کہ ڈیموں اور نہروں سمیت پانی کے انتظام سے متعلق بڑے منصوبوں کی اپنی اہمیت ہے، لیکن ان چھوٹے اقدامات کی بھی ایک اہمیت ہے، اس حقیقت کو مدنظر رکھتے ہوئے کہ یہ سرمایہ کاری مؤثر، لاگو کرنے میں آسان اور سیاست سے بھی پاک ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔