پی ایس ایل سے آئی پی ایل کا ٹکراؤ؛ فرنچائزز نے مخالفت کردی

سلیم خالق  بدھ 15 مئ 2024
غیر ملکی پلئیرز کو 3، 4 لاکھ ڈالرمعاوضہ دینے پر ملکی اسٹارز کے اعتراض کا خدشہ (فوٹو: ایکسپریس)

غیر ملکی پلئیرز کو 3، 4 لاکھ ڈالرمعاوضہ دینے پر ملکی اسٹارز کے اعتراض کا خدشہ (فوٹو: ایکسپریس)

پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) فرنچائزز نے انڈین پریمئیر لیگ (آئی پی ایل) سے شیڈول کے تصادم کی مخالفت کردی۔

تفصيلات کے مطابق پی ایس ایل کرکٹ کمیٹی کا اجلاس گزشتہ روز منعقد ہوا، اس میں دسویں ایڈیشن کے شیڈول سمیت ایونٹ میں جدت لانے کیلئے تجاویز پر غور کیا گیا، پی سی بی نے چند روز قبل اگلے ایڈیشن کا مجوزہ شیڈول فرنچائزز کو ارسال کیا تھا جس کے مطابق آغاز 12 اپریل جبکہ فائنل 20 مئی کو ہوگا، شیڈول کا براہ راست آئی پی ایل سے تصاوم ہو رہا ہے، فرنچائز اس سے خوش نہیں اور انھوں نے میٹنگ میں مشترکہ طور پر بورڈ کو اپنے تحفظات سے بھی آگاہ کردیا۔

فرنچائزز کا کہنا ہےکہ لیگ کیلئے کوئی اور ونڈو تلاش کرنا چاہیے تاکہ بڑے کھلاڑی پاکستان آ سکیں، اس موقع پربورڈ کی جانب سے آئیکون پلیئرز کو راغب کرنے کی تجاویز سے فرنچائزز کو آگاہ کیا گیا جنھوں نے سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ اگر 3،4 لاکھ ڈالر کسی غیرملکی کرکٹر کو دیں گے تو اپنے اسٹار پلیئر کو کتنا معاوضہ دیا جائے گا؟ وہ بھی تو اعتراض کرے گا کہ اسے کیوں کم رقم دی جا رہی ہے؟۔

مزید پڑھیں: پی ایس ایل کا مذاق؛ بھارتیوں کے پیروں تلے زمین نکلنے لگی

لیگ میں جدت لانے کیلیے امپیکٹ پلیئر اور ٹاس کیلئے سکے کے بجائے بیٹ اچھالنے جیسی تجاویز فرنچائزز نے مسترد کردیں، ان کے مطابق ایسا تو دیگر لیگز میں بھی کیا جا رہا ہے تو جدت کیسے ہوئی۔

مزید پڑھیں: پی ایس ایل2025؛ پی سی بی نے آئی پی ایل سے متصادم تاریخیں تجویز کردیں

واضح رہے کہ امپیکٹ پلیئر کا قانون آئی پی ایل کے دوران تنقید کا نشانہ بن رہا ہے، اگلے ایونٹ میں اسے ختم بھی کرنا ممکن ہوگا، بیٹ سے ٹاس بگ بیش میں کئی برسوں سے ہو رہی ہے، میٹنگ کی باتوں پر اب پی سی بی حکام اور فرنچائز اونرز کی گورننگ کونسل میٹنگ میں تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔