نیٹ میٹرنگ مخالف پراپگینڈے کے پیچھے ڈسکوز اور آئی پی پیز گٹھ جوڑ

ظفر بھٹہ  جمعرات 30 مئ 2024
نجی بجلی گھر کیپیسٹی پیمنٹ مد میں صارفین سے 2800 ارب سالانہ نچوڑ رہے ہیں

نجی بجلی گھر کیپیسٹی پیمنٹ مد میں صارفین سے 2800 ارب سالانہ نچوڑ رہے ہیں

 اسلام آباد: کیا نیٹ میٹرنگ واقعی بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں (ڈسکوز ) کو نقصان پہنچا رہی ہے ؟ یہ محض ایک افسانہ ہے۔

ایک طرف وزارت توانائی کی حمایت یافتہ پاور ڈسٹری بیوشن کمپنیاں بجلی کی فراہمی پر اپنی اجارہ داری بر قرار رکھنے کے لیے نیٹ میٹرنگ پالیسی کو ختم کرنے کا پروپیگنڈا کر رہی ہیں اور دوسری طرف وہ انڈیپینڈنٹ پاور پروڈیوسرز (آئی پی پیز ) کو بچانے کی کوشش کر رہی ہیں جبکہ آئی پی پیز صلاحیت کی ادائیگی کی مد میں غریب صارفین سے 2.8 ٹریلین روپے وصول کر رہی ہیں ۔

یہ ڈسکوز اور وزارت توانائی میں بیٹھے افسران آئی پی پیز کو بچانا چاہتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ غریب صارفین کھربوں روپے کی صلاحیت کی ادائیگیاں کرتے رہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ جو پاور پلانٹس ایک یونٹ بھی پیدا نہیں کر رہے تھے ان کو صلاحیت کی ادائیگی کی مد میں صارفین 18 روپے فی یونٹ ادا کر رہے ہیں۔

توانائی کی بڑھتی ہوئی قیمتوں اور ماحولیاتی خدشات سے نشان زد ایک ایسے منظر نامے میں نیٹ میٹرنگ پورے پاکستان میں گھرانوں کے لیے لچک کی روشنی کے طور پر ابھری ہے۔

صارفین کو شمسی اور قابل تجدید توانائی کے نظام کو استعمال کرنے کے قابل بنا کر نیٹ میٹر نگ نے نہ صرف یوٹیلیٹی بلوں میں اضافے سے ریلیف فراہم کیا ہے بلکہ توانائی کے ایک زیادہ پائیدار ماحولیاتی نظام کی طرف تبدیلی کو بھی متحرک کیا ہے۔

اس پالیسی نے افراد کو اپنی توانائی کی کھپت پر قابو پانے کا اختیار دیا ہے ، جس سے جدت اور خود انحصاری کی فضاء بن گئی ہے۔

تاہم نیٹ میٹرنگ کی کامیابیوں کے درمیان حکومت کو توانائی کی لچک کی ضرورت کے ساتھ مالیاتی سمجھداری کو متوازن کرنے کے مشکل کام کا سامنا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اس سے پاکستان کے درآمدی بل میں سالانہ 500 ملین ڈالر سے 1 بلین ڈالر کا اضافہ ہو سکتا ہے جس سے ملک کے معاشی چیلنجز بڑھ جائیں گے اور غیر ملکی کرنسی کے ذخائر پر اضافی دباؤ پڑے گا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ نیٹ میٹر نگ کی پالیسی کے متعارف ہونے کے بعد تقریبا 113,000 گھرانے جو کل کا 0.3 فیصد بنتا ہے، نیٹ میٹرنگ کی طرف منتقل ہو چکے ہیں۔

ان صارفین کی اکثریت نے بینکوں سے قرضے حاصل کر کے نیٹ میٹرنگ سسٹم تک رسائی حاصل کی ہے ، خود کو سود کے معاوضوں کے ساتھ ساتھ کئی سالوں سے جاری ادائیگی کے نظام الاوقات سے مشروط کیا ہے۔ اس لیے نیٹ میٹرنگ کے صارفین کو امیر کے طور پر درجہ بندی کرنا غلط ہے۔

پائیدار توانائی کے طریقوں کی طرف اس تبدیلی کو تسلیم کرنے اور اس کی حوصلہ افزائی کرنے کے بجائے حکومت کا نیٹ میٹرنگ یونٹ کے نرخوں کے لیے قیمتوں کے تعین کی اسکیموں میں ہیرا پھیری یا مجموعی میٹر نگ کی طرف منتقلی سبز توانائی کو اپنانے کے لیے ممکنہ خطرہ ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ حکومت کے لیے نیٹ میٹرنگ پالیسی کی وکالت اور حمایت کرنا ضروری ہے۔ بجلی کے بنیادی ڈھانچے کی بہتری تیز رفتار اقتصادی ترقی کو تیز کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ سبز توانائی کے حل کو اپنانے سے درآمدی بلوں کو نمایاں طور پر کم کیا جا سکتا ہے ، روپے کی شرح مبادلہ پر دباؤ کو کم کیا جا سکتا ہے اور صنعتوں کو زیادہ مسابقتی قیمتوں پر بجلی تک رسائی کے قابل بنایا جا سکتا ہے۔

ماہرین نے خبر دار کرتے ہوئے کہا کہ صارفین کو توانائی ذخیرہ کرنے کے اخراجات برداشت کرنے اور ممکنہ طور پر گرڈ سے مکمل طور پر منقطع ہونے کا باعث بن سکتا ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔