چیئرمین پی ٹی آئی کی اڈیالہ جیل منتقلی کی درخواست پر حکومت سے جواب طلب

ویب ڈیسک  بدھ 9 اگست 2023
نواز شریف نے استدعا کی تھی اور وہ کوٹ لکھپت جیل چلے گئے تھے، عدالت

نواز شریف نے استدعا کی تھی اور وہ کوٹ لکھپت جیل چلے گئے تھے، عدالت

اسلام آباد ہائیکورٹ نے اٹک جیل سے اڈیالہ جیل منتقلی اور سہولیات کی فراہمی کی چیئرمین پی ٹی آئی کی درخواست پر وفاقی اور پنجاب حکومت کے نمائندگان سے جمعہ تک جواب طلب کرلیا۔

چیف جسٹس عامر فاروق نے چیئرمین پی ٹی آئی کی درخواست پر سماعت کی۔ چیئرمین پی ٹی آئی کے وکیل شیر افضل مروت نے دلائل دیے کہ عدالتی حکم کے مطابق کل اٹک جیل گئے لیکن انہوں نے ہمیں ملنے کی اجازت نہیں دی۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کیا جیل میں ملاقات کا کوئی وقت ہوتا ہے؟ وکیل نے بتایا کہ چھ بجے تک ملاقات کا وقت ہوتا ہے۔ وکیل شیر افضل مروت نے کہا کہ چیئرمین پی ٹی آئی کو نو بائی پانچ کے سیل میں رکھا گیا ہے۔ مچھر اور حشرات الارض ہیں، بارش کا پانی بھی اندر گیا ہوا ہے، کوئی ایک وجہ نہیں کہ چیئرمین پی ٹی آئی کو اٹک جیل میں رکھا جائے۔

وکیل شیر افضل نے کہا کہ ایک اور واقعہ بھی پیش آیا ہے، کل ایک وکیل کو بلایا آج خواجہ حارث کو بلایا گیا ہے۔

چیف جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ میرے علم میں آیا ہے تحقیقات کا مطلب کسی کو ہراساں کرنا نہیں ہوتا، میں ایڈمنسٹریٹر سائیڈ پر اس معاملے کو دیکھوں گا۔ ایک چیز کا خیال رکھیں قانون کی خلاف ورزی نا ہو، عدالت نے کہا کہ جو قانون میں ہے وہ آپ ضرور دیں گے۔

وکیل نے استدعا کی کہ لسٹ کے مطابق اگر عدالت ملاقات کا آرڈر کر دے جس پر عدالت نے کہا کہ لسٹ کے مطابق آرڈر کر دوں گا لیکن سیاسی اجتماع نا بنایے گا، وکیل نے یقین دہانی کروائی سارے لوگ ایک دم نہیں جائیں گے۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ بس کہنے کا مقصد یہ ہے کہ 50 لوگ سیاسی اجتماع نا بن جائے، چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ اڈیالہ نہیں بلکہ کسی اور جیل میں بھیجنا ہے یہ فیصلہ کون کرے گا؟ میاں نواز شریف نے استدعا کی تھی اور وہ کوٹ لکھپت جیل چلے گئے تھے۔

عدالت نے نوٹس جاری کرتے ہوئے سماعت 11 اگست تک ملتوی کر دی۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔