باجوڑ حملے میں ٹی ٹی پی اور داعش دونوں کے ملوث ہونے کا انکشاف

ویب ڈیسک  بدھ 9 اگست 2023
باجوڑ دھماکے کے معاملے میں اہم پیش رفت ہوئی ہے، ڈی آئی جی سی ٹی ڈی (فوٹو: فائل)

باجوڑ دھماکے کے معاملے میں اہم پیش رفت ہوئی ہے، ڈی آئی جی سی ٹی ڈی (فوٹو: فائل)

 پشاور: ڈی آئی جی سی ٹی ڈی خیبر پختون خوا نے کہا ہے کہ باجوڑ حملے میں ٹی ٹی پی اور داعش دونوں کے ملوث ہونے کے شواہد ملے ہیں جب کہ خیبر حملے میں ٹی ٹی پی ملوث تھی۔

خیبر میں مسجد میں ہونے والے خودکش حملے  سے متعلق انہوں نے بتایا کہ اس کارروائی میں 8 سہولت کاروں کو گرفتار کیا گیا ہے۔  حملے میں ٹی ٹی پی ملوث ہے۔ علی مسجد حملے کی منصوبہ بندی ننگرہار میں کی گئی۔

یہ خبر بھی پڑھیں: جمرود؛ مسجد میں چھپے دہشت گرد نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا، ایڈیشنل ایس ایچ او شہید

ڈی آئی جی کے مطابق حملے کے روز جائے وقوع سے دوسرے خود کش ابو ذر کو گرفتار کیا گیا ، جس کی نشاندہی پر نیٹ ورک کا پتا چلا ۔ خود کش حملہ آور کو افغانستان سے لایا گیا  تھا اور وہ افغان باشندہ تھا، جس کی شناخت انصار کے نام سے ہوئی۔علی مسجد خود کش حملہ آور نے غیر قانونی طور پر سرحد پار کی ۔

خود کش بمبار نے کپڑے تبدیل کر کے پولیس یونیفارم پہنا اور مسجد تک آیا۔  حملہ آور کو 1000 روپے دے کر سوزوکی میں سلطان خیل سے علی مسجد تک لایا گیا ۔ علی مسجد حملے کی منصوبہ بندی افغان صوبے ننگرہار میں کی گئی ۔ خود کش حملہ آور سے ایف سی اور پولیس کے یونیفارمز ملے  ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ خیبر واقعے میں ٹی ٹی پی ملوث ہے۔

یہ بھی پڑھیں: باجوڑ؛ جے یو آئی ورکرز کنونشن خودکش حملہ، جاں بحق افراد کی تعداد 46 ہوگئی

ڈی آئی جی سی ٹی ڈی  کے مطابق باجوڑ  میں ہونے والے دہشت گردی کے واقعے میں ٹی ٹی پی اور داعش دونوں کے ملوث ہونے کے شواہد ملے ہیں۔ سکھ ٹارگٹ کلنگ ، علما کی ٹارگٹ کلنگ میں بھی داعش ملوث تھی ۔ باجوڑ دھماکے کے معاملے میں اہم پیش رفت ہوئی ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔