دوسرے کیڑوں کو ’خودکشی‘ کی طرف مائل کرنے والا خطرناک کیڑا

ویب ڈیسک  اتوار 18 فروری 2024
[فائل-فوٹو]

[فائل-فوٹو]

یہ کیڑا بظاہر نقصان دہ نظر نہیں آتا لیکن یہ ایک خوفناک طفیلی کیڑا (parasite) ہے جو کہ hairworm کے نام سے جانا جاتا ہے۔

یہ ہیئروارم اپنے میزبان کیڑے (host) کے جسم میں جاکر اسکے دماغ کو کنٹرول کرتا ہے اور بالآخر وہ کیڑا جیسے کسی سحر کے زیرِ اثر ہو، پانی پر جا کر خود کو غرق آب کردیتا ہے۔

ہیئروارم اپنے ہوسٹ میں جا کر اس کے جینیاتی کوڈ کو چراکر اس کے ذہن کو قابو کرلیتا ہے اور پھر اسے کسی پانی کی سطح پر لے جاکر غرقاب کردیتا ہے تاکہ اپنی نسل کی افزائش کا عمل جاری رکھ سکے۔

ہیئروارم جب انڈے کے بعد اگلے مرحلے لاروا میں ہوتا ہے تو اس کا پہلا مقصد کھانے کے ذریعے ٹیڈپول (مینڈک کے بچے) یا مچھر کے اندر جانا ہوتا ہے۔ اس کے بعد یہ اس وقت تک غیر فعال رہتا ہے جب تک کہ ٹیڈپول یا مچھر کو بڑے کیڑے جیسے جھینگر، ٹڈا یا مینٹیس نہ کھالیں۔

جب یہ ٹیڈپول یا مچھر بڑے کیڑوں کے پیٹ میں ہضم ہو جاتے ہیں تو پھر ہیئروار بڑے ہوسٹ کے پیٹ میں ہی باہر نکلتا ہے اور اس کی اندرونی غذائیت کو جس میں جینیات بھی ہوتی ہیں، اندر سے ختم کرکے اسے لاچار و بےبس بنا دیتا ہے۔

اس پورے عمل میں صرف تین ماہ لگتے ہیں جس کے بعد ہیئروارم اپنے ہوسٹ کو پانی کی طرف  ڈوبانے کے لیے لے جاتا ہے۔

چونکہ ہیئروارم پانی میں افزائش پاتے ہیں اس لیے ہوسٹ کے مرنے کے بعد وہ اپنی افزائش کو دوبارہ شروع کرنے کے لیے قریب ترین ہیئروارم تک رسائی حاصل کرتے ہیں اور پھر مذکورہ بالا عمل ازسرنو شروع ہوجاتا ہے۔

اگرچہ سائنسدانوں کو ہیروارم کی اس ’جادوئی چال‘ کے بارے میں برسوں سے معلوم تھا تاہم اسکے ’برین واش‘ کرنے کے طریقہ کار کے بارے میں حال ہی میں معلوم ہوا ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔