1971ء میں پاکستان دو ٹکڑے ہوا اور عمران خان اس پر بھی سیاست کررہا ہے، شرجیل میمن

ویب ڈیسک  منگل 28 مئ 2024
(فوٹو: فائل)

(فوٹو: فائل)

سینئر وزیر اطلاعات سندھ شرجیل انعام میمن نے کہا ہے کہ سانحہ 1971ء میں پاکستان کے دو حصے ہوئے اور عمران خان اس پر بھی سیاست کررہا ہے، ہماری قوم آنکھیں کھولے اور اسے بھروپیے کو پہچانے۔

کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آج کا دن ملک کی تاریخ کا اہم دن ہے آج کے دن پاکستان میں ایٹمی دھماکے  کیے گئے جن کا مقصد پوری دنیا کو بتانا تھا کہ ہمارا ملک کمزور نہیں ایٹمی طاقت ہے، ایٹمی ٹیکنالوجی کے بانی شہید ذوالفقار علی بھٹو تھے جنہوں نے ملک کو ایٹمی طاقت دی لیکن بعد میں بھٹو کی پوری فیملی نے ملک کو ایٹمی طاقت بنانے کی قیمت ادا کی۔

انہوں ںے کہا کہ سوچی سمجھی سازش کے تحت ایک شخص جیل میں بیٹھ کر انٹرویو بھی دے رہا ہے اور اس کے آرٹیکل بھی چھپ رہے ہیں، جیل میں بیٹھ کر وہ شخص حکومتیں بنا رہا ہے ٹکٹیں دے رہا ہے اور ٹوئٹر چلا رہا ہے، کل جیل سے بیٹھ کر ٹوئٹر پر ویڈیو لگائی جس میں مجیب الرحمان کو قومی ہیرو کہہ دیا ایسے گمراہ کن حقائق پیش کیے گئے۔

انہوں ںے کہا کہ 1971ء میں پاکستان کے دو حصے ہوئے اس پر بھی سیاست کرنے کی کوشش کی گئی، عمران خان کی لڑائی کسی سیاسی جماعت سے نہیں کسی ادارے سے نہیں بلکہ پاکستان سے ہے، عمران خان ملک کو نقصان پہنچانے کی کوشش کر رہا ہے یہ شخص ہم پر تھوپا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ سکوت ڈھاکا میں کئی معصوم جانیں گئیں ان حقائق کو توڑ کر غلط اسٹوری بیچنے کی کوشش کی جا رہی ہے اس کا ذمہ دار مختلف لوگوں کو ٹھہرایا جارہا ہے، نوجوان نسل کو ایڈٹ کی ہوئی ویڈیوز دکھا کر گمراہ کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان بے ساکھی پکڑ کرآئے، عمران خان ایک احسان فراموش شخص ہے ہماری قوم آنکھیں کھولے عمران خان جیسے بھروپیے کو پہچانیں، عمران خان نے کل فوج کو گھسیٹنے کی کوشش کی عمران خان جب اقتدار میں تھا تو فوج کی تسبیح پڑھ رہا تھا جب اقتدار سے ہٹا تو اسی فوج کے خلاف بولنے لگا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔