’بابراعظم بڑا کھلاڑی ہے لیکن اُسے چاہیے وہ بطور ’’کپتان‘‘ یاد رکھا جائے‘

ویب ڈیسک  ہفتہ 16 ستمبر 2023
بطور چیف سلیکٹر بابراعظم اور ٹیم مینجمنٹ کے ہمراہ تاہم کپتان اور کوچ کا انتخاب بلکل مختلف ہوتا تھا، شاہد آفریدی
(فوٹو: ایکسپریس ویب)

بطور چیف سلیکٹر بابراعظم اور ٹیم مینجمنٹ کے ہمراہ تاہم کپتان اور کوچ کا انتخاب بلکل مختلف ہوتا تھا، شاہد آفریدی (فوٹو: ایکسپریس ویب)

قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان شاہد آفریدی نے انکشاف کیا کہ بورڈ میں بطور چیف سلیکٹر ایک ماہ یا اس سے تھوڑا زائد عرصہ گزارنا کسی افرتفری سے کم نہیں تھا۔

نجی ٹی وی چینل کو دیئے گئے انٹرویو میں سابق کپتان شاہد آفریدی نے کہا کہ بطور چیف سلیکٹر بابراعظم اور ٹیم مینجمنٹ کے ہمراہ رہا ہوں لیکن یہ بات بتادوں کہ کپتان اور کوچ کا انتخاب بلکل مختلف ہوتا تھا، دونوں مجھے الگ رپورٹس دیتے تھے جبکہ رابطہ نام کی کوئی چیز موجود نہیں تھی، میں خود حیران تھا کہ بورڈ چل کیسے رہا ہے؟۔

مزید پڑھیں: ایشیاکپ؛ بابراعظم کی کپتانی پر گمبھیر نے بھی سوال اٹھادیا

انہوں نے کہا کہ بطور چیف سلیکٹر ایک ماہ یا اس سے تھوڑا زائد عرصہ گزارنا کسی افرتفری سے کم نہیں تھا۔

سابق کپتان مشورہ دیا کہ ہمارے پاس ٹائم نہیں ہے اب ورلڈکپ کھیلنے جانا ہے، میرے خیال میں مکی آرتھر سمیت تمام سینئرز کو بیٹھ کر بات کرنی چاہیے تاکہ مضبوط حکمت عملی بنائی جاسکے اور سخت فیصلے کرنے سے نہ گھبرائیں۔ ایسے فیصلوں سے یا تو آپ جیتیں گے یا آپ سیکھیں گے۔

مزید پڑھیں: ایشیاکپ؛ شاہد آفریدی نے داماد شاہین کی سرزنش کردی

انہوں نے کہا کہ بابراعظم 3 سال سے ٹیم کی قیادت کررہے ہیں انکے اردگرد پیشہ ور افراد موجود ہیں، وہ اپنی کپتانی کو بہتر کرنے کیلئے بات کریں، وہ بڑے کھلاڑی ہیں لیکن انہیں چاہیے، لوگ انہیں بطور کپتان یاد رکھیں۔

مزید پڑھیں: ایشیاکپ؛ قومی ٹیم کی ناقص بیٹنگ پر سابق بھارتی کپتان بھی خاموش نہ رہ سکے

واضح رہے کہ ایشیاکپ میں پاکستان کی بھارت اور سری لنکا کے خلاف شکست پر بابراعظم کی کپتانی پر کڑی تنقید کی گئی تھی جبکہ سری لنکا کے خلاف اہم معرکے میں انکی کپتانی پر سابق بھارتی کرکٹر گوتم گمبھیر نے بھی انہیں تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔