پی ٹی آئی سے لانگ مارچ کیلیے مالی ضمانت لی جائے، آئی جی اسلام آباد

ویب ڈیسک  ہفتہ 19 نومبر 2022
پی ٹی آئی25 مئی کو بھی اپنی یقین دہانی کی خلاف ورزی کرچکی ہے، رپورٹ (فوٹو فائل)

پی ٹی آئی25 مئی کو بھی اپنی یقین دہانی کی خلاف ورزی کرچکی ہے، رپورٹ (فوٹو فائل)

 اسلام آباد: پی ٹی آئی لانگ مارچ اور احتجاج کے حوالے سے آئی جی اسلام آباد نے اپنی رپورٹ عدالت میں جمع کروادی ہے، جس میں تجویز دی گئی ہے کہ کسی بھی قسم کے نقصان کے پیش نظر تحریک انصاف سے مالی ضمانت لی جائے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ میں جمع کروائی گئی تفصیلی رپورٹ میں چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کو لاحق خطرات سے متعلق تھریٹ الرٹس بھی شامل کی گئی ہیں۔آئی  جی اسلام آباد نے رپورٹ میں بتایا کہ پی ٹی آئی25 مئی کو بھی اپنی یقین دہانی کی خلاف ورزی کرچکی ہے۔ اسی سلسلے میں علی امین گنڈاپور اور دیگر پی ٹی آئی رہنماؤں کے اشتعال انگیز بیانات بھی رپورٹ کا حصہ ہیں۔

آئی جی اسلام آباد کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پی ٹی آئی کے ایک رہنما نے وزیر داخلہ کو جان کی دھمکی بھی دی۔ ویڈیوز بھی موجود ہیں جن میں کارکنوں کو غلیلیں دی جارہی ہیں جب کہ شیخ رشید اور فیصل واوڈا کہہ چکے ہیں کہ یہ خونی مارچ ہو گا۔ خود چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان بھی تسلیم کر چکے ہیں کہ ان کے کچھ لوگ مسلح ہیں۔

رپورٹ کے مطابق سپریم کورٹ واضح کر چکی ہے کہ اجتماع کی اجازت جمہوری حق کے طور پر دی جاتی ہے۔ سپریم کورٹ یہ بھی قرار دے چکی ہے کہ اجتماع قانونی حکومت کو ختم کرانے کے لیے نہیں ہو سکتا۔ احتجاج سے ڈپلومیٹک موومنٹ بھی بند ہو جاتی ہے۔

آئی جی اسلام آباد کی جانب سے درخواست کی گئی ہے کہ ائرپورٹ تک جانے والے راستوں پر وفاقی ایجنسیز کو اختیار دیا جائے۔ عدالت میں جمع کروائی گئی رپورٹ میں تجویز دی گئی ہے کہ پی ٹی آئی سے فنانشل گارنٹی (مالی ضمانت) بھی لی جا سکتی ہے کہ کوئی نقصان نہ ہو۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ پی ٹی آئی مطلوبہ ضمانت دے تو کنٹینرز بھی رکھنے کی ضرورت نہیں ہو گی۔ عدالتی فیصلوں کے مطابق ہی پی ٹی آئی کو احتجاج کی اجازت دی جائے۔ مطلوبہ شرائط کے مطابق احتجاج ہوا تو سکیورٹی دینے کو تیار ہیں۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔