زینب عباس کا بھارت چھوڑنے کے بعد پہلا بیان سامنے آگیا

ویب ڈیسک  جمعرات 12 اکتوبر 2023
فوٹو: سوشل میڈیا

فوٹو: سوشل میڈیا

پاکستانی اسپورٹس پریزینٹر زینب عباس کا بھارت چھوڑنے کے بعد پہلا بیان سامنے آگیا۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ’ایکس‘ پر شیئر کردہ پوسٹ میں زینب عباس نے کہا کہ میں نے ہمیشہ اپنے پسندیدہ کھیل کیلئے سفر کے مواقع ملنے پر خود کو انتہائی خوش قسمت تصور کیا ہے اور بھارت میں میرا قیام خوشگوار اور لوگوں کا رویہ مشفقانہ تھا۔

زینب عباس کا کہنا ہے کہ مجھے نہ تو بھارت چھوڑنے کا کہا گیا نہ ہی ملک بدر کیا گیا۔ مجھے فوری طور پر وہاں کوئی خطرہ نہیں تھا تاہم انٹرنیٹ پر اپنے خلاف آنے والے ردعمل سے خوفزدہ ہوگئی تھی۔ اس صورتحال سے میرے خاندان اور سرحد کے دونوں طرف کے دوست بھی پریشان تھے۔

مزید پڑھیں: شدید دباؤ، پاکستانی پریزینٹر زینب عباس نے بھارت چھوڑ دیا

زینب عباس نے اپنی پوسٹس پر معذرت کرتے ہوئے کہا کہ میں ان پوسٹس سے ہونے والی تکلیف کو سمجھ سکتی ہوں اور اس پر افسوس کرتی ہوں۔ اس طرح کی زبان کیلئے کوئی عذر یا گنجائش نہیں اور جن لوگوں کی بھی دل آزاری ہوئی میں اُن سے معافی چاہتی ہوں۔ میں اُن لوگوں کی شکر گزار ہوں جنہوں نے اس مشکل وقت میں میرے لیے فکرمندی اور تعاون کیا۔

یاد رہے کہ زینب عباس کرکٹ ورلڈ کپ میں بطور پریزینٹر اپنے فرائض انجام دینے بھارت پہنچی تھیں تاہم انہیں بھارت میں مسلسل دباؤ کا سامنا کرنا پڑا جس کے بعد انہوں نے حفاظتی اقدام کے طور پر 9 اکتوبر کو بھارت چھوڑ دیا تھا۔

مزید پڑھیں: زینب عباس کیخلاف کیس درست اقدام نہیں، بلاجواز گھسیٹا جارہا ہے، دفترخارجہ

زینب عباس کے قریبی ذرائع نے انکے بھارت سے دبئی پہنچنے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہوں نے یہ قدم اپنی فیملی اور دیگر براڈ کاسٹرز کے مشورے کے بعد اٹھایا ہے۔

بھارت میں ایک وکیل نے زینب عباس پر بھارت مخالفانہ ٹوئٹس کرنے کا الزام لگا کر مقدمہ درج کرنے کی درخواست دی تھی، زینب عباس کی جانب سے یہ ٹوئٹس کئی سال پہلے کی گئی تھیں۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔