جبرالٹر سے

جاوید چوہدری  اتوار 23 اگست 2015
www.facebook.com/javed.chaudhry

www.facebook.com/javed.chaudhry

اور میں پھر طارق بن زیاد کے شہر میں داخل ہو گیا، جبرالٹر میرے سامنے تھا، دور دور تک تاحد نظر سمندر کا نیلگوں پانی تھا، پانی کے درمیان خشکی کا ایک چھوٹا سا ٹکڑا تھا، خشکی کے اس چھوٹے سے ٹکڑے پر پہاڑیاں تھیں اور ان پہاڑیوں پر موسیٰ بن نصیر کے اس غلام زادے کے قدموں کے نشان تھے جنھیں اس کی زندگی میں بھی مٹانے کی کوشش کی گئی، اس کی موت کے بعد بھی اور پھر تاریخ کے قبرستان میں دفن ہونے کے بعد بھی لیکن اللہ جب کسی کو عزت دیتا ہے تو پھر پوری دنیا مل کر بھی اس کا نام گہنا نہیں سکتی اور طارق بن زیاد اس سچائی کا ایک جیتا جاگتا ثبوت تھا، ثبوت ہے اور ثبوت رہے گا، آپ اگر اسپین میں سفر کریں، اندلس کی اس سلطنت میں داخل ہوں جس کی بنیاد مسلمانوں نے 710ء میں رکھی تھی، جس میں مسلمانوں نے قرطبہ، غرناطہ، اشبیلیہ اور طلیطہ جیسے شہر آباد کیے اور جہاں سے مسلمانوں نے آدھا فرانس فتح کر لیا۔

آپ اس گم گشتہ اندلس میں سفر کرتے ہوئے مراکش کی طرف چلیں، آپ غرناطہ سے ہوتے ہوئے لالینا پہنچیں، لالینا میں اسپین ختم ہو جائے گا تو آپ کو سمندر کے پانیوں میں خشکی کا ایک ٹکڑا ڈولتا ہوا نظر آئے گا، یہ ٹکڑا وہ زمین ہے جسے عربوں نے طارق بن زیاد کے نام سے منسوب کیا، اسے جبل طارق کا نام دیا، یورپ میں مسلمانوں کی سلطنت سات سو سال کا سفر طے کر کے ختم ہوئی، جب اندلس کا آخری مسلمان بھی وہاں سے رخصت ہو گیا اور جبل طارق پر بھی عیسائی جھنڈا لہرا دیا گیا تو ہسپانیہ کے لوگوں نے جبل طارق کو جبرالٹر بنا دیا، نام بدل گیا لیکن تاریخ آج بھی اسے جبل طارق ہی کہتی ہے اور یہ آخری سانس تک یہی کہتی رہے گی کیونکہ یہ اعزاز اللہ نے اس بربر زادے کو بخشا تھا اور قدرت کے بخشے اعزازوں کی کوئی ایکسپائری ڈیٹ نہیں ہوا کرتی۔

طارق بن زیاد کون تھا؟ یہ ہمیں ہمارے پنجابی استادوں نے تیسری جماعت میں پڑھا دیا تھا، وہ کہاں سے آیا، اس نے کہاں اور کیوں اپنی کشتیاں جلائیں، وہ کس جرات مندی سے لڑا اور اس نے آخر میں کیا کامیابی حاصل کی؟ یہ داستان بھی بچپن ہی میں ہمارے ذہنوں میں بھر دی گئی تھی، ہم قرطبہ کا قاضی، غرناطہ کے آخری مسلمان حکمران ابو عبداللہ محمد اور مسجد قرطبہ کی داستانیں پڑھ پڑھ کر جوان ہوئے ہیں، رہی سہی کسر مستنصر حسین تارڑ کے سفر ناموں نے پوری کر دی، مستنصر صاحب صرف لکھاری، افسانہ نویس یا سفر نامہ نگار نہیں ہیں، یہ پاکستان کی تین نسلوں کے محسن بھی ہیں، انھوں نے ملک میں سفر کا شوق بھی پیدا کیا اور لوگوں کو دنیا دیکھنے کا جذبہ بھی عنایت کیا، میں مستنصر صاحب کے قدموں پر قدم رکھتا ہوا تیسری بار اندلس پہنچا ہوں، پہلے دو سفر ادھورے تھے، میں نے ان سفروں میں قرطبہ بھی دیکھا اور غرناطہ بھی۔ میں رات کے آخری پہر میں قرطبہ کی گلیوں میں بھی پھرا اور میں نے الحمراء کے شیروں والے فوارے کے ساتھ تصویر بھی بنائی لیکن دو حسرتیں رہ گئیں۔

الحمراء کے سامنے قدیم ہوٹل ہیں، ان کی کھڑکیوں سے الحمراء نظر آتا ہے، میں ان میں سے کسی ہوٹل کی کھڑکی سے الحمراء کی شام دیکھنا چاہتا تھا لیکن مجھے دونوں مرتبہ ہوٹل میں کمرہ نہ ملا، میں اس بار پاکستان ہی سے بندوبست کر کے غرناطہ پہنچا، دوسرا میں زندگی میں کم از کم ایک بار طارق بن زیاد کا شہر جبرالٹر بھی دیکھنا چاہتا تھا، میں اس زمین کو ہاتھ لگانا چاہتا تھا، میں اس پر سجدہ ریز ہونا چاہتا تھا جس پر پہنچ کر طارق بن زیاد نے عصر کی نماز ادا کی، اللہ تعالیٰ سے نصرت کی دعا کی، اپنے جہازوں (کشتیوں) کو آگ لگائی اور پھر اپنے مٹھی بھر لشکر سے مخاطب ہوا، آپ کے آگے دشمن اور پیچھے سمندر ہے، فیصلہ تم نے کرنا ہے، تم نے لڑ کر جیت کر زندہ رہنا ہے یا پھر سمندر میں ڈوب کر جان دینی ہے، جوانوں نے یک آواز ہو کر جواب دیا، ہم جئیں یا مریں، ہم لڑیں گے، ہم لڑیں گے اور پھر یورپ میں پہلی مسلمان ریاست نے جبرالٹر میں آنکھ کھولی، میں جبرالٹر کو دیکھنے کی حسرت میں جمعہ کی دوپہر جبرالٹر پہنچ گیا، پورا شہر، پورا ملک سامنے بکھرا تھا۔

وہ بنو امیہ کا دور تھا، ولید بن مالک مسلمانوں کا خلیفہ تھا، دمشق اسلامی ریاست کا دارالحکومت تھا، موسیٰ بن نصیر افریقہ کا والی تھا، ابراہیم بن یوسف موسیٰ کا خادم تھا، ابراہیم نے زندگی کے ہر اس موڑ پر اپنے آقا کا ساتھ دیا جہاں سارے ساتھی ساتھ چھوڑ گئے، ابراہیم نے دوبار موسیٰ کی جان بھی بچائی، موسیٰ نے اس وفاداری کے بدلے ابراہیم کو اپنا منہ بولا بھائی اور نائب قرار دے دیا، ابراہیم ایک جنگ میں شہید ہو گیا، ابراہیم کی بیوہ نے اپنے ننھے بیٹے طارق کا ہاتھ پکڑا اور موسیٰ کے محل پہنچ گئی، موسیٰ نے طارق کے سر پر ہاتھ رکھ دیا، یوں طارق بن زیاد موسیٰ بن نصیر کی سرپرستی میں آ گیا، وہ ایک پیدائشی جرنیل تھا، سپہ گری اس کے خون میں شامل تھی، وہ تلوار کے ساتھ اس طرح کھیلتا تھا جس طرح پرندے ہواؤں سے کھیلتے ہیں، وہ بلا کا ذہین بھی تھا، ایمان اور شجاعت بھی اس پر فدا تھی، وہ جوان ہوا تو موسیٰ بن نصیر نے اسے طنجہ کا گورنر بنا دیا، یہ شہر آج کل مراکش کا حصہ ہے، سمندر کے پانی اسپین اور طنجہ کو ایک دوسرے سے جدا کرتے ہیں، دونوں ملکوں میں 14 کلو میٹر کا فاصلہ ہے لیکن سماجی مسافت بہت طویل ہے، مراکش افریقہ میں ہے اور اسپین یورپ میں۔

طارق بن زیاد نے شہر کا نظم و نسق سنبھال لیا، اسپین میں اس وقت راڈرک کی حکومت تھی، یہ گاتھ قوم کا بادشاہ تھا، ظالم بھی تھا، لالچی بھی اور بے راہرو بھی۔ اس دور میں مختلف علاقوں کے والی اپنے بچوں کو شاہی آداب سکھانے کے لیے بادشاہوں کے محلات اور درباروں میں بھجوایا کرتے تھے، کاؤنٹ جولین شاہ راڈرک کا ایک والی تھا، اس کی بیٹی ’’فلورنڈا‘‘ دربار سے وابستہ تھی، وہ بے انتہا خوبصورت تھی، بادشاہ اس کی خوبصورتی دیکھ کر بھٹک گیا، اس نے اسے محل میں بلایا اور بے آبرو کر دیا، بیٹی نے باپ کو اطلاع دے دی، باپ بیٹی کو لینے محل پہنچ گیا، شاہ کے سامنے حاضر ہوا اور اپنی کسی حرکت سے یہ ظاہر نہ ہونے دیا وہ بیٹی پر گزری قیامت سے واقف ہے، اس نے چھٹیاں گزارنے کے بہانے بیٹی کو ساتھ لیا اور گھر روانہ ہو گیا، وہ جب آخری ملاقات کے لیے بادشاہ کے پاس گیا تو بادشاہ نے اس سے کہا ’’ جولین تم اس بار ہمارے لیے کوئی تحفہ نہیں لائے‘‘ جولین نے ادب سے جھک کر عرض کیا ’’حضور میں اگلی بار آپ کو ایسا تحفہ دوں گا، لوگ صدیوں تک اسے یاد رکھیں گے‘‘ جولین اس کے بعد سیدھا موسیٰ بن نصیر کے پاس حاضر ہوا اور اسے اسپین پر حملے کی ترغیب دی۔

وہ یورپ کے ساتھ چھیڑ چھاڑ نہیں کرنا چاہتا تھا لیکن جولین کی ترغیبات بھی تگڑی تھیں اور اس کی کہانی بھی افسوس ناک چنانچہ موسیٰ بن نصیر نے اپنے دو جرنیلوں طارق بن زیاد اور طریف بن مالک کو سات سات ہزار جوانوں کے دو لشکر بنا کر دیے اور انھیں جولین کے ساتھ اسپین روانہ کر دیا، یہ دونوں جرنیل صرف ریکی کے لیے آئے تھے لیکن وہ اسپین کی سرزمین پر قدم رکھتے ہی شوق جہاد کے ایسے جنون میں مبتلا ہوئے کہ وہ اس وقت تک واپس نہیں لوٹے جب تک اسپین کے تمام بڑے شہر ان کے قدموں میں نہیں آ گئے، طریف بن مالک اسپین کے جس ساحل پر اترا وہاں اس کے نام سے ایک شہر آباد ہوا، یہ شہر آج بھی طریفا کے نام سے موجود ہے، یہ ایک جدید شہر ہے، لوگ اسے طریفا پکارتے اور طریفا لکھتے ہیں لیکن یہ شہر کس نے آباد کیا، کیسے آباد کیا اور کیوں آباد کیا؟ زیادہ تر لوگ اس حقیقت سے واقف نہیں ہیں، طارق بن زیاد 5 اپریل 710ء کو جبرالٹر میں اترا اور جہازوں کو آگ لگائی، اس کے پاس کل سات ہزار جوان تھے، اکثریت اس کے اپنے قبیلے بربر سے تعلق رکھتی تھی، راڈرک چالیس ہزار فوج لے کر آیا، مقابلہ ہوا، راڈرک کو شکست ہوئی اور وہ میدان سے فرار ہو گیا۔

طارق بن زیاد جبرالٹر کا قبضہ لینے کے بعد اسپین میں اتر گیا، 19 جولائی 711ء کو وادی لکا میں بڑا معرکہ ہوا، راڈرک یہ جنگ بھی ہار گیا اور یوں اندلس پر عملاً مسلمانوں کا قبضہ ہو گیا، اسلامی لشکر نے اس کے بعد طلیطہ پر بھی قبضہ کر لیا، یہ شہر آج بھی قائم ہے اور ٹولیدو کہلاتا ہے، طارق بن زیاد کی فتوحات کی خبریں جب افریقہ پہنچیں تو موسیٰ بن نصیر کے دل میں طارق کے لیے رشک کا جذبہ پیدا ہو گیا، اس نے طارق کو مزید فتوحات سے روک دیا، اپنی سلطنت اپنے بیٹے عبداللہ بن موسیٰ کے حوالے کی اور 18 ہزار جوان لے کر خود بھی اسپین پہنچ گیا، یہ جس مقام سے اندلس پہنچا، وہ بعد ازاں جبل موسیٰ کہلایا لیکن یہ جبرالٹر کی طرح مشہور نہ ہو سکا، موسیٰ اسلامی لشکر کو قرطبہ تک لے گیا، خلیفہ بن ولید بن مالک ایک ’’سیلف سینٹرڈ‘‘ بادشاہ تھا، وہ اپنے علاوہ کسی کو کامیاب اور کامران نہیں دیکھ سکتا تھا۔

اس نے طارق بن زیاد اور موسیٰ بن نصیر کی فتوحات کی خبریں سنیں تو اس نے دونوں کو دمشق طلب کر لیا، موسیٰ نے قرطبہ کا چارج اپنے بیٹے عبداللہ کے حوالے کیا اور طارق کو لے کر دمشق پہنچ گیا، بادشاہ نے دونوں کو معزول کیا اور ان کا احتساب شروع کر دیا یہاں سے اسلامی تاریخ کے دو عظیم جرنیلوں کا زوال شروع ہو گیا اور یہ دونوں گم نامی کے اندھیروں میں اتر گئے، طارق بن زیاد 720ء میں فوت ہوا، اس وقت اس کی عمر محض 39 سال تھی، وہ کیسے مرا، اس کے جنازے میں کتنے لوگ تھے اور وہ کہاں دفن ہوا تاریخ کے پاس کوئی جواب نہیں تاہم تاریخ اتنا جانتی ہے مسلمانوں کو آج تک جتنا نقصان مسلمانوں نے پہنچایا، اتنا نقصان کوئی دوسرا نہیں پہنچا سکا اور طارق بن زیاد اور موسیٰ بن نصیر اس حقیقت کی بہت بڑی مثال ہیں۔

طارق بن زیاد اور موسیٰ بن نصیر تاریخ کے گم نام صحراؤں میں گم ہو گئے لیکن اسپین آج بھی زندہ ہے، زندگی جبرالٹر میں بھی زندہ ہے اور جب تک جبرالٹر اور اسپین دونوں موجود ہیں دنیا کا کوئی شخص طارق بن زیاد اور موسیٰ بن نصیر سے ان کا نام اور کارنامہ نہیں چھین سکتا، طارق اور موسیٰ کے زوال کے بعد اندلس کی سلطنت کو جھٹکا لگا، فتوحات کا سلسلہ رک گیا، موسیٰ بن نصیر کا بیٹا عبداللہ بن نصیر قرطبہ میں قتل کر دیا گیا لیکن یہ افراتفری عارضی تھی کیونکہ 788ء میں اموی شہزادے عبداللہ اول نے قرطبہ میں پہلی اسلامی سلطنت کی بنیاد رکھی، مسلمان آگے بڑھے اور اسلامی سلطنت شمالی اسپین کے علاقے استوریاس اور فرانس کے وسط تورز تک پھیل گئی۔

یہ اسلامی سلطنت 1460ء تک قائم رہی، اس دوران یورپ کے عیسائی اکھٹے ہوئے، 1072ء میں اندلس پر حملے شروع ہوئے، 1212ء میں عیسائیوں نے طولوسہ فتح کر لیا، 1236ء میں قرطبہ سے اسلامی پرچم اتر گیا، 1250ء میں ٹولیدو اور اشبیلیہ بھی چلا گیا اور جنوری 1492ء میں غرناطہ کی چابیاں بھی فرڈینینڈ اور ازابیلا کو مل گئیں، اندلس کے 30 لاکھ مسلمانوں کو قتل کر دیا گیا، زندہ جلا دیا گیا یا پھر عیسائی بنا لیا گیا لیکن یہ بعد کی کہانیاں ہیں، میں آج جبل طارق میں تھا جسے دنیا جبرالٹر کہتی ہے، جہاں آج سے 1300 سال قبل ایک بربر زادے نے قدم رکھا، اذان دی اور اس زمین کو مسلمان بنا لیا اور جبرالٹر، آج کا جبرالٹر کھلی کتاب کی طرح میرے سامنے کھلا پڑا تھا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔